اک عالم پر ہوں میں چھایا ہوا عمران خان کی عوامی مقبولیت عروج پر۔

پاکستان تحریک انصاف کے چیئرمین اس وقت نئے انتخابات کے لیے ملک میں لانگ مارچ کر رہے ہیں۔

اک عالم پر ہوں میں چھایا ہوا عمران خان کی عوامی مقبولیت عروج پر۔

پاکستان تحریک انصاف کے چیئرمین جنہوں نے  اپنی عملی زندگی کا آغاز بحثیت کھلاڑی کیا۔انہوں نے انیس سو بیانوے کے ورلڈکپ میں پاکستان کو فتح دلائی اور ورلڈ کپ پاکستان کے نام کیا۔اس کے بعد انہوں نے کھیل کے میدان سے ریٹائرمنٹ لے لی۔

عمران خان نے اپنی والدہ کے نام پر لاہور میں شوکت خانم کینسر ہسپتال کا آغاز کیا۔انہوں نے شوکت خانم اسپتال کے لئے لیے چندہ مہم کا آغاز کیا۔شوکت خانم ہسپتال میں غریبوں کا کینسر کا مفت علاج کیا جاتا ہے۔اب شوکت خانم ہسپتال پشاور اور کراچی میں بھی موجود ہے۔

عمران خان کی عملی زندگی میں نمل یونیورسٹی کا قیام بھی قابل ذکر ہے۔نمل یونیورسٹی میانوالی میں قائم کی گئی ہے۔

عمران خان نے اپنی سیاسی زندگی کا آغاز 22 سال پہلے ایک جماعت کی بنیاد جس کا نام تحریک انصاف رکھا گیا سے کیا۔عمران خان اپنے بیس سالہ سیاسی جدوجہد میں پہلی مرتبہ 2018 میں وزیراعظم پاکستان کے عہدے پر براجمان ہوئے۔

اس دوران ملک کو معاشی طور پر بہت سے مسائل کا سامنا تھا جس کی اہم وجہ عالمی طور پر پھیلنے والی کرونا کی وبا ہے۔عمران خان نے بہت سے عوام دوست منصوبوں کا آغاز کیا۔اور عوام کو ٹیکسوں کی مد میں میں بھاری رقم بھی ادا کرنی پڑی۔اپریل 2020 کو پاکستان کی تمام سیاسی جماعتوں نے عمران خان کے خلاف متحد ہوکر تحریک عدم اعتماد کے ذریعے ان کو ان کے عہدے سے معزول کر دیا۔

اس وقت عمران خان پاکستان کے مقبول ترین عوامی رہنما ہیں۔عمران خان کا ایک مطالبہ ہے ان کی حکومت کو سازش کے ذریعے ہٹایا گیا اس لیے ملک میں ایک نئی جمہوری حکومت لانے کے لیے شفاف اور قبل از وقت انتخابات انتہائی ضروری ہیں۔