چین اسٹور ایسوسی ایشن آف پاکستان کی عید خریداری میں 12 مئی تک نرمی کی درخواست #urduheadline

7


عید شاپنگ میں توسیع سے حکومت کو انکم ٹیکس کی مد میں 40 سے 50 ارب روپے کا ریونیو حاصل ہوگا

عید شاپنگ میں توسیع سے حکومت کو انکم ٹیکس کی مد میں 40 سے 50 ارب روپے کا ریونیو حاصل ہوگا

کراچی: چین اسٹور ایسوسی ایشن آف پاکستان نے داخلی سطح پر تجارتی بحران سے بچنے کے لیے عید کی خریداری میں 12 مئی تک نرمی کی درخواست کردی ہے۔

وفاقی حکومت نے کویوڈ ۔19 کی جاری تیسری لہر کو توڑنے کے سلسلے میں 8 مئی سے شروع ہونے والی عید کی سب سے طویل تعطیلات سمیت “اسٹیم ہوم اسٹف سیف” پابندیوں کا اعلان کرچکی ہے۔

چین اسٹور ایسوسی ایشن کے چیئرمین طارق محبوب نے ایکسپریس کو بتایا کہ جی ڈی پی کی نمو میں تیز رفتاری کے ساتھ اضافے کے لیے ہر کاروباری مواقع سے استفادہ کرنا چاہٸیے، جی ڈی پی نمو موجودہ حکومت کی بھی اولین ترجیح ہے ، مختصر اوقات اور کم ایام پہلے ہی بڑے پیمانے پر ہجوم کا نتیجہ بن چکے ہیں جس سے صارفین اور ملازمین کے لئے خطرات بڑھ چکے ہیں جیسا کہ پہلے بتایا گیا تھا، ہجوم کے باوجود ، زیادہ تر رییٹلرز  کاروبار کرنے کے قابل نہیں ہیں کیونکہ وہ ایک وقت میں صرف چند گراہکوں کو سنبھال سکتے ہیں اور ایس او پیز پر عمل کروا سکتے ہیں۔

گزشتہ دس دنوں میں عید شاپنگ کا تقریبا 70  سے 80 فیصد ریکارڈ کیا گیا ہے جب کہ اس سال پورے ملک میں عید شاپنگ کا مجموعی حجم تقریبا 600 تا 700 ارب روپے ہے۔ اس طرح ، گذشتہ دس دن کی خریداری کا حصہ لگ ​​بھگ 430 سے 560 ارب روپے تک آتا ہے، اس شعبے کی نمائندہ تجارتی تنظیم کی حیثیت سے کیپ کا اندازہ ہے کہ عید خریداری کے آخری دس دن سے سیلز اور انکم ٹیکس میں کم از کم 30 سے ​​40 ارب ٹیکس محصول وصول ہوگا۔

طارق محبوب نے وضاحت کی کہ ریٹل کے ذریعہ فروخت ہونے والے سامان کے لئے ٹیکس ہر مرحلے پر پیدا کیا گیا تھا جیسے درآمد ، مینوفیکچرنگ ، تھوک اور خوردہ لہذا مجموعی طور پر خوردہ سے ٹیکس کی پیداوار ایف بی آر کے تخمینے سے کہیں زیادہ ہے، نصف سے زیادہ ٹیکس پہلے ہی فراہمی کے مراحل پر تیار ہوچکا ہے تاہم ، جب رییٹلرز اپنے سامان فروخت کرنے کے قابل ہوجاتے ہیں تو ان کے سپلائرز کو ادائیگی کرنے کے بعد باقی رقم سرکاری خزانے کو ادا کردی جائے گی۔ لیکن اب تک رییٹلرز کی اربوں روپے کی فروخت نہ ہونے والی انوینٹری میں پھنس چکے ہیں۔

انہوں نے مشاہدہ کیا کہ اگر عید شاپنگ کو پوری طرح سے اجازت نہ دی گئی تو پورا نظام گھٹن میں پڑ جائے گا۔ انہوں نےکہا کہ ملک کی جی ڈی پی نمو حاصل کرنے کے لئے ، تجارتی سرگرمیوں کے عروج وقت پر معیشت کے پہیے کو کم کرنے کے بجائے اس کا رخ موڑنا ضروری ہے۔ منظم رئیٹل کو رمضان کے دوران گذشتہ سال کے لاک ڈاؤن کے نقصان کو جذب کرنے کے لئے پہلے ہی بہت جدوجہد کر رہا ہے جس نے عید اور رمضان کی فروخت کو بھی متاثر کیا۔ انہوں نے کہا کہ برانڈز کی ایک بڑی تعداد اپنی ماضی کی فہرستوں کو بھی صاف نہیں کرسکتی ہے۔ اس مشکل صورتحال کے باوجود ہم نے اپنی ورک فورس میں اجرت اور تنخواہوں کی مکمل ادائیگی کو یقینی بنانے کے لئے اپنی بچت میں اضافہ کیا ہے۔ تاہم ، اگر صورتحال بہتر نہ ہوئی تو بہت ساری شاخیں اور کاروبار عید کے بعد بند ہوسکتے ہیں جس کے نتیجے میں ملازمت کو ناگزیر ہوجانا پڑے گا۔


#urduheadline



.

Leave A Reply

Your email address will not be published.